مگر ہمیں کیا ۔۔۔۔ ! ۔۔

ایک نظم کے جواب میں لکھی میری ایک نظم

مگر ہمیں کیا ۔۔۔۔ !

تم آڑھے ترچھے خیال سوچو
کہ بے ارادہ ۔۔۔۔۔ کتاب لکھو
کوئی ۔۔۔۔۔ شناسا غزل بھی کہہ دو
کہ اجنبی انتساب ۔۔۔۔۔ لکھو
گنوا دو اک عمر کے زمانے ۔۔۔۔ !
کہ ایک ۔۔۔۔۔ پل کا حساب لکھو
تمہاری طبیعت پہ منحصر ۔۔۔ ہے
تم جس طرح کا ۔۔۔ نصاب لکھو
یہ تمہارے اپنے مزاج ۔۔۔۔ پر ہے
عذاب سوچو ۔۔۔۔ثواب ۔۔۔ لکھو

طویل تر ہے ۔۔۔۔۔ سفر ہمیں کیا ؟
تم جی رہی ہو۔۔۔۔ مگر ہمیں کیا ؟

مگر ہمیں کیا ۔۔۔۔ کہ تم تو کب سے
اپنے ۔۔۔۔۔۔۔ ارادے گنوا چکی ہو
جلا کے سارے حروف ۔۔۔۔۔ اپنے
اپنی ……….دعائیں بجھا چکی ہو
تم رات اوڑھو۔۔۔۔۔ کہ صبح پہنو
تم اپنی رسمیں اٹھا ۔۔۔۔ چکی ہو
سنا ہے۔۔۔۔ سب کچھہ بھلا چکی ہو

تو اب اپنے دل پہ ۔۔۔۔ جبر کیسا ؟
یہ دل ۔۔۔۔ تو حد سے گزر چکا ہے
گزر چکا ہے ۔۔۔۔۔۔ مگر ہمیں کیا ؟
خزاں کا۔۔۔۔۔ موسم گزر چکا ہے
ٹھہر ۔۔۔۔۔ چکا ہے مگر ہمیں کیا ؟

مگر ہمیں کیا ………کہ اس خزاں میں
تم جس طرح کے ۔۔۔ بھی خواب لکھو

About

1 comment Categories: Poetry Tags:

One thought on “مگر ہمیں کیا ۔۔۔۔ ! ۔۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *